دنیا کے پاس طالبان حکومت کو تسلیم کرنے کے علاوہ کوئی آپشن نہیں، وزیراعظم عمران خان

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ دنیا کے پاس افغانستان میں طالبان کی حکومت کو تسلیم کرنے کے علاوہ کوئی دوسرا راستہ موجود نہیں ہے۔

فرانس کے لی فیگارو کو انٹرویو دیتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ طالبان حکومت کو تسلیم کرنے والا پاکستان واحد ملک نہیں ہو سکتا، یہ ایک اجتماعی عمل ہونا چاہیے۔

اگر پاکستان تسلیم کرنے والا پہلا ملک ہے تو بین الاقوامی دباؤ ہم پر بہت زیادہ ہو جائے گا کیونکہ ہم اپنی معیشت کا رخ موڑنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

وزیر اعظم نے کہا، "پاکستان سمجھتا ہے کہ افغان حکومت جتنی زیادہ مستحکم ہوگی وہاں دہشت گرد گروپ اتنے ہی کم کام کر سکے گی۔

انہوں نے کہا کہ طالبان حکومت نے اسلام آباد کو ایک جامع حکومت بنانے اور انسانی حقوق کو یقینی بنانے کی یقین دہانی کرائی ہے۔

افغانوں سے یہ توقع نہیں کی جانی چاہیے کہ وہ خواتین کے حقوق کا احترام نہ کریں، جیسا کہ مغربی لوگ انہیں سمجھتے ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ طالبان نے پاکستان سے کہا ہے کہ خواتین کو تعلیم دینی چاہیے۔

ایک سوال کے جواب میں وزیراعظم  نے کہا کہ پاکستان کی پہلی تشویش مہاجرین ہیں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ "اگر افغانستان میں انسانی بحران مزید بڑھتا ہے تو ہمارے پاس مہاجرین کی آمد ہو گی، جب کہ کابل کے سقوط کے بعد 240,000 سے زیادہ پہلے ہی اپنے ملک سے فرار ہو چکے ہیں۔ ہمارے پاس مزید پناہ گزینوں کو قبول کرنے کے وسائل نہیں ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہم دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پہلے ہی 80 ہزار جانیں گنوا چکے ہیں اور ہم افغان حکومت کے ساتھ تصادم نہیں چاہتے، ہم جنگ میں نہیں امن میں امریکا کے ساتھ شراکت دار ہوں گے۔

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button